Sunday, April 28, 2013

انا کا وقار

کہیں کہیں پہ طلب کا خمار باقی ہے  
میری وفا میں ذرا سا وقار باقی ہے
 

جھکا نہیں ہے کسی اور کے لیے یہ دل
میری انا میرے پروردگار باقی ہے